Press "Enter" to skip to content

POLITICS

National, International Politics and Trends in General

یکم مئی سے قبل افغانستان سے آدھی امریکی فوج کا انخلاء ہوجائے گا: طالبان

ماسکو: طالبان حکام نے دعویٰ کیا ہے کہ امریکا نے وعدہ کیا کہ یکم مئی سے قبل افغانستان سے آدھی فوج واپس بلالی جائے گی تاہم دوسری جانب امریکی فوج کے مطابق فوج کے انخلاف کا ٹائم فریم فی الحال طے نہیں ہوا۔

ماسکو میں طالبان اور افغان اپوزیشن جماعتوں کے رہنماؤں کے درمیان ہونے والے مذکرات کے موقع پر سائڈ لائن ملاقاتوں کے موقع پر بات کرتے ہوئے طالبان رہنما عبدالسلام حنفی کا کہنا تھا کہ امریکی حکام نے عہد کیا ہے کہ افغانستان سے فوج کا انخلاء رواں ماہ سے شروع ہوجائے گا۔

عبدالسلام حنفی نے میڈیا نمائندوں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ امریکا نے طالبان کو یقین دہانی کرائی ہے کہ فروری کے ابتدائی ایام سے اپریل کے اختتام تک افغانستان سے آدھی فوج کو واپس بلالیا جائے گا۔

دوسری جانب پینٹاگون کے ترجمان کنرل روب میننگ کا کہنا ہے کہ طالبان کے ساتھ امن مذاکرات جاری ہیں تاہم امریکی فوج یا محکمہ دفاع کو اب تک افغانستان سے انخلاء کا کوئی ہدایات موصول نہیں ہوئیں۔

یاد رہے کہ روس کے شہر ماسکو میں طالبان اور افغانستان کی اپوزیشن جماعتوں کے رہنماؤں کے درمیان دو روزہ مذاکرات ہوئے جس کے دوران افغان تنازع کے حل کیلئے افغانوں کے مابین مذاکرات جاری رکھنے پر اتفاق کیا گیا۔

Please follow and like us:

Parliament House, President/PM House, SC building lack satisfactory fire prevention mechanism

Prime Minister House, President House, Parliament House, Parliament Lodges and Supreme Court of Pakistan- the country’s most premier buildings in Capital still not adopted satisfactory fire prevention mechanism despite various advisory notices from the concerned department, documents available with Daily Times revealed the shocking news of highest negligence of the administrations of these buildings.

According to the Directorate of Emergency & Disaster Management (DEDM), Building Standards in Ordinance on Safety Regulations 2010 necessitate protective measures of fire prevention, life safety and fire protection operating in the country’s capital as per the ordinance of 2010- a copy of which available with this scribe.

” According to Islamabad Fire Prevention & Life Safety Regulation 2010 which extends to whole Islamabad Capital Territory (ICT), all such precautionary measures are necessary which deal with the prevention, control & fighting of fire, to ensure the safety of life and property in case of fire. Building Standards include three clauses-fire prevention, life safety and fire protection. The authority has power to seal all those buildings violating the ordinance by not taking enough measures of fire prevention and safety of public life” the ordinance spot lighted.

Prime Minister House, the country’s premier building where head of the country is residing didn’t adopt the advisory notices of the Emergency directorate; the basic equipment mostly installed in mini private buildings but PM house hasn’t even the basic provisions.

The documents added that fire extinguishers installed in PM House are not enough nor satisfactorily meet the standards; those available are mostly old or non-functional. House reels, wet risers and sprinkler system in the buildings are still not available as the administration of the building didn’t respond to the advisory notices mostly a highest negligence violating the 2010 ordinance of fire prevention and life safety.

Automatic smoke detectors, fire detectors and signalling devices also not installed for fire fighting, information added.

Wooden partition in PM House, barricades in evacuations routes, no emergency exits or contact numbers add to the vulnerabilities of the building.

Documents also highlighted the President building has no proper mechanism for fire fighting and life safety.

Fire extinguishers, house reels, wet raisers and sprinkler system are mostly not according to the standard requirements of the 2010 ordinance of fire prevention, the data revealed.

Documents further mentioned that automatic fire fighting system, smoke detectors, fire detectors, emergency exits, emergency contact numbers, blocked evacuation routes, barricades in fire vehicles due to security constraints, installations on floor of the buildings for thunder lights and partially wooden partitions are the high risks for fire eruptions and high casualties in President house in case of emergency.

Documents available with Daily Times further highlighted the negligence of Parliament House and Parliament lodges’ administrations not taking serious the Emergency department advisory notices for life safety.

Parliament house and Parliament lodges didn’t adopt a well satisfactory mechanism for fire fighting and life safety even after 9 years of the 2010 ordinance.

Fire extinguishers, basic equipment for controlling fire as first response measure, are low in numbers in parliament house and parliament lodges. Aspirating Smoke Detector (ASD), house reels, wet raiser are not available in both buildings or some installed in buildings are not functional since long due to negligence of the administration.

The information further added that sprinkler system, automatic fire fighting system, HVAC for fire protection and fire alarms are mostly not installed in both buildings to counter any emergency in future.

“Light arresting management isn’t available, the evacuation routes are dumped due to various reason;, exit signs and emergency numbers aren’t mentioned in buildings, and the electric installations are unsatisfactory in both buildings, the documents added.

Experts in the concerned department believe that since both buildings consist of 90% wooden partitions and in the absence of full fire mechanism system, both buildings are in high risk of fire eruption which can cause severe emergency and high human casualties

The building of custodian of the Constitution, Supreme Court of Pakistan also lag behind in terms of effective fire mechanism.

The documents added that in Supreme Court of Pakistan building, the fire extinguishers are low in number according to the standards of the ordinance while those installed have mostly been non-functional since long.

“Automatic sprinkler system, Smoke and fire detectors, automatic fire controlling system, house reels, wet raisers, fire pumps, emergency lights in suspension of electric supply, are mostly not available in the building, the documents added.

Emergency evacuation routes and entrance points for fire vehicles in case of emergency are mostly blocked due to security barricades. Smoke ventilation system is mostly blocked as well as the fire alarms are old. Additionally in Supreme Court building, the exit signs, emergency contact numbers, alternate evacuation routes are not explicitly marked inside the building. The electric wiring system, gas supply, and partially wooden partition are additional risk for the building during emergency.

The documents further added that most of the ministries inside the capital and 90% buildings of Islamabad- both government and Private sector- are not safe due to improper equipment’s installations inside the buildings for life safety. According to the 2010 ordinance for fire prevention and life safety, the authorities have power to impose fine up to 0.5 million as well as sealing buildings in case of violation.

A high official of the Directorate of Emergency and Disaster Management (DEDM) told Daily Times wishing anonymity that the authorities of the department served notices to these buildings but imposing a fine or sealing the building isn’t possible due to the expected reaction. Also, it was a mini directorate not capable enough to take such a bold step. It was best to make masses as well as the departments aware of the issues and advocate for adopting the preventive measures as soon as possible. Various calls to the concerned PROs were made but no one responded on the issue.

Please follow and like us:

Pakistan receives first tranche of $1bn from UAE

KARACHI: The State Bank of Pakistan (SBP) has received first installment of $1 billion from United Arab Emirates (UAE) to support the country’s financial and monetary policy,ARY News reported on Thursday.

A spokesman of the SBP has said that the bank has received first tranche of one billion US dollars from the package of $3 bn, announced by the UAE after visit of Prime Minister Imran Khan.

On January 22, Pakistan and United Arab Emirates (UAE) had reached agreement on $3bn support Package in Abu Dhabi.

State Bank of Pakistan’s (SBP) Governor Tariq Bajwa and Abu Dhabi Fund for Development’s chairman signed on the agreement in Abu Dhabi. UAE is providing the loan to Pakistan to help enhance liquidity and to support the country’s financial and monetary policy.

On January 6, the speculations about a financial package by the UAE, were confirmed during the visit of Crown Prince of Abu Dhabi Sheikh Mohammad Bin Zayed Al Nahyan.

A statement by the Ministry of Information issued shortly afterwards thanked the United Arab Emirates (UAE) crown prince for the generous balance of payment support of US $3bn.

Please follow and like us:

وزیراعظم آج قطر کے دو روزہ دورے پر روانہ ہوں گے

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان آج قطر کے دو روزہ دورے پر روانہ ہوں گے۔ 

وزیراعظم کو اس دورے کی دعوت امیر قطر شیخ تمیم بن حمد الثانی نے دی تھی۔

قطری سفیر صقر بن مبارک کے مطابق وزیراعظم پاکستان اس دورے میں امیر قطر شیخ تمیم بن حمد الثانی اور قطری وزیراعظم عبداللہ بن ناصر بن خلیفہ الثانی سے ملاقاتیں کریں گے، جس کے دوران باہمی دلچسپی کے امور زیر غور آئیں گے۔

وزیراعظم اس دورے کے دوران پاکستانی افرادی قوت کو قطر بھیجنے کے حوالے سے بھی بات چیت کریں گے۔

Please follow and like us:

وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس جاری

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس جاری ہے، جس کے دوران ملک کی معاشی حالت و توانائی سمیت 26 نکاتی ایجنڈا زیرغور آئے گا۔

ذرائع کے مطابق اجلاس میں میگا منی لانڈرنگ کیس کی جے آئی ٹی رپورٹ کی روشنی میں 172 افراد کے نام ای سی ایل پر ڈالنے سے متعلق خصوصی کمیٹی رپورٹ پیش کرے گی اور مختلف افراد کے نام ای سی ایل میں رکھنے اور نکالنے کے بارے میں تجاویز پر غور ہوگا جبکہ سپریم کورٹ کے حکم پر بلاول بھٹو اور وزیر اعلیٰ سندھ سمیت دیگر افراد کے نام نکالنے کے معاملے پر بھی غور کیا جائے گا۔

اجلاس میں فوجی عدالتوں کی مدت میں توسیع سے متعلق آئینی ترمیم کا مسودہ پیش کیے جانے اور وزارت قانون اور کابینہ ڈویژن کا اس حوالے سے بریفنگ کا امکان ہے۔

نئی حج پالیسی 2019 پر بھی کابینہ کو بریفنگ دی جائے گی اور حج اخراجات بڑھانے کی سفارشات کا جائزہ لیا جائے گا۔

کیپیٹل ڈیولپمنٹ اتھارٹی (سی ڈی اے) کے نئے چیئرمین کی تقرری کی منظوری، قائم مقام ڈی جی سول ایوی ایشن اور پی آئی اے کے ڈائریکٹرز سمیت مختلف اداروں میں حکام کی تقرری کی منظوری ایجنڈے میں شامل ہے۔

اجلاس میں ترکی کے شہری گوخن یلدرم کی گرفتاری اور ڈیپورٹیشن کی منظوری دی جائےگی جبکہ اقتصادی رابطہ کمیٹی (ای سی سی) اور سی سی او پی کے فیصلوں کی توثیق بھی کی جائے گی۔

Please follow and like us:

ٹرمپ اور کانگریس اراکین کے درمیان شٹ ڈاؤن کے خاتمے کیلئے مذاکرات بے نتیجہ ختم

واشنگٹن: امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ عارضی شٹ ڈاؤن کے خاتمے کے لیے کیے جانے والے مذاکرات سے اٹھ کر چلے گئے اور اسے وقت کا ضیاع قرار دے دیا۔

میکسیکو کی سرحد کے ساتھ دیوار کی تعمیر کے لیے 5 بلین ڈالرز کے فنڈز کے تقاضے پر صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور ریپبلکن اراکین کے درمیان ڈیڈ لاک برقرار ہے اور اس سلسلے میں مذاکرات کی ایک اور کوشش ناکام ہوگئی۔

امریکا میں جزوی شٹ ڈاؤن کے باعث 9 مختلف محکموں کے 8 لاکھ وفاقی ورکرز اور متعدد ایجنسیوں کے ورکرز کام نہیں کر رہے، شٹ ڈاؤن کے باعث امیگریشن نظام بری طرح متاثر ہے اور عدالتی نظام بھی شدید بحرانی صورتحال کا شکار ہے۔

وائٹ ہاؤس میں ڈونلڈ ٹرمپ اور ایوان نمائندگان کے اراکین نینسی پیلوسی اور چک شومر کے درمیان ہونی والی ملاقات بے نتیجہ ختم ہوگئی۔

صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے مذاکرات کا احوال بتاتے ہوئے ٹوئٹر پر بیان جاری کیا جس میں بتایا کہ وہ نینسی اور چک شومر کے ساتھ ہونے والے مذاکرات چھوڑ کر آگئے جو صرف وقت کا ضیاع تھا۔

امریکی صدر نے کہا کہ میں نے ان سے پوچھا اگر یہی صورتحال رہی تو 30 دن میں کیا ہوگا، اور بارڈر سیکیورٹی کے لیے دیوار یا خاردار تار کی وہ منظوری دے رہے ہیں یا نہیں؟۔

ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا ان کے سوال پر مذاکرات میں شریک نینسی نے کہا ‘نہیں’ جس پر وہ ‘بائے بائے’ کہہ کر واپس آگئے۔

یاد رہے کہ گزشتہ روز امریکی صدر نے قوم سے خطاب کے دوران میکیسکو کی سرحد کے ساتھ دیوار کی تعمیر کے عزم کو دہرایا اور کہا کہ میکسیکو کی سرحد پر انسانی بحران جنم لے رہا ہے جو دل اور روح کا بحران ہے۔

اوول آفس میں تقریر کرتے ہوئے ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا تھا کہ دیوار کی تعمیر صحیح اور غلط، انصاف اور ناانصافی کے درمیان فرق کا انتخاب ہے، ڈیموکریٹس وائٹ ہاؤس دوبارہ آئیں اور مذاکرات کریں۔

Please follow and like us:

’مجھے کیوں نکالا‘، چیف جسٹس اور نیئر رضوی میں دلچسپ مکالمہ

اسلام آباد: سپریم کورٹ میں کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس پاکستان اور نیئر رضوی کے درمیان ’مجھے کیوں نکالا‘ پر دلچسپ مکالمہ ہوا۔

سپریم کورٹ میں چیف جسٹس پاکستان کی سربراہی میں اسلام آباد فارم ہاؤسز پر تعمیرات سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی جس دوران سی ڈی اے نے فارم ہاوسز پر زائد تعمیرات سےمتعلق پیشرفت رپورٹ جمع کرائی۔

سی ڈی اے کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ اسلام آباد میں کل 478 فارم ہاؤسز ہیں، 117 فارم ہاؤسز میں قواعد سے ہٹ کر زائد تعمیرات کی گئیں۔

چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ ہم نےتعمیر کی حد12,500 مربع فٹ مقررکی تھی، اس سے زائد پر 7000 روپےفی مربع فٹ جرمانہ عائد کیا تھا، عمارتیں گرانے سے لوگوں کا نقصان ہوگا، ہم چاہتے ہیں ریگولرائزئیشن کیلئے سی ڈی اے کو پیسے دیں، ہم سی ڈی اے کو امیر کرنا چاہتے ہیں۔

جسٹس ثاقب نثار نے مزید ریمارکس دیے کہ برآمدے گرائے گئے تو پوری عمارت کو نقصان ہوگا۔

چیف جسٹس نے سوال کیا کہ کورنگ دریا سے تجاوزات ختم ہوگئیں؟ اس پر سابق ایڈیشنل اٹارنی جنرل نیئر رضوی نے بتایا کہ کورنگ دریا سے تجاوزات ہٹانے کے لیے 22 دسمبر کی تاریخ دی گئی تھی۔

نیئر رضوی نے کہا کہ کورنگ دریا سے تجاوزات ہٹانے کے کیس کی وجہ سے مجھے نکالا گیا، اس پر چیف جسٹس نے مسکراتے ہوئے مکالمہ کیا کہ ’آپ کو کیوں نکالا‘۔

چیف جسٹس کے مکالمے پر نیئر رضوی نے بھی مسکراتے ہوئے جواب دیا ’جی مجھے کیوں نکالا‘۔

بعدازاں عدالت نے کیس کی مزید سماعت کل تک ملتوی کردی۔

واضح رہےکہ سابق وزیراعظم میاں نوازشریف کی وزارتِ عظمیٰ ختم ہونے کے بعد انہوں نے مختلف جلسوں اور ریلیوں سے خطاب کے دوران ’مجھے کیوں نکالا‘ کے جملے کا استعمال کیا جو نہ صرف سوشل میڈیا پر مقبول ہوا بلکہ اس کا تذکرہ سیاسی رہنماؤں نے بھی وقتاً فوقتاً کیا۔

Please follow and like us:

ملائیشیا کے بادشاہ سلطان محمد پنجم کا تخت سے دست برداری کا اعلان

کوالالمپور: ملائیشیا کے بادشاہ سلطان محمد پنجم نے تخت سے دست برداری کا اعلان کر دیا۔

سلطان محمد پنجم دسمبر 2016ء میں پانچ سال کی مدت کے لیے بادشاہ بنے تھے، وہ نومبر 2018ء میں علاج کے لیے رخصت پر گئے اور دو ماہ بعد وطن واپس آکر گزشتہ روز تخت سے دست برداری کا اعلان  کیا۔

وہ ملائیشیا کے پندرہویں بادشاہ تھے۔

شاہی محل نے سبکدوشی کے اعلان میں تخت سے دست برداری کی وجوہات یا صحت سے متعلق کوئی تفصیلات نہیں بتائیں، تاہم گذشتہ دنوں رپورٹس سامنے آئی تھیں کہ سلطان محمد پنجم نے روس کی سابق ملکہ حسن اوکسانا ویوہڈینا سے شادی کرلی ہے، جنہوں نے نکاح سے قبل اسلام قبول کیا اور ان کا نام ریحانہ رکھا گیا تھا۔

تاہم شاہی محل کی جانب سے سلطان محمد کی شادی کی افواہوں پر بھی کچھ نہیں کہا گیا۔

واضح رہے کہ ملائیشیا میں بادشاہ کا کافی احترام کیا جاتا ہے جبکہ سلطان محمد پنجم کھیلوں کے شوقین ہونے کی وجہ سے بھی کافی مقبول ہیں۔

ملایشیا میں 1957 میں برطانیہ سے آزادی کے بعد سے آئینی بادشاہت قائم ہے اور ملک کی 9 ریاستوں کے حکمران باری باری 5 سال کے لیے تخت نشین ہوتے ہیں۔

تاہم ملائیشیا کی بادشاہت کی تاریخ میں یہ پہلا موقع ہے کہ کسی بادشاہ نے مدت پوری ہونے سے قبل تخت سے دست برداری کا اعلان کیا ہے۔

Please follow and like us:

چیف جسٹس مہمند ڈیم کے سنگِ بنیاد کی تاریخ بدلنے پر حکومت پر برہم

اسلام آباد: چیف جسٹس پاکستان نے حکومت کی جانب سے مہمند ڈیم کے سنگِ بنیاد کی تاریخ تبدیل کرنے پر وفاقی وزیر فیصل واوڈا پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعظم نےاپنا شیڈول دیکھا اور تاریخ بدل دی، یہ نہ دیکھا ہم نے بھی کام دیکھنا ہوتا ہے۔

سپریم کورٹ میں چیف جسٹس پاکستان کی سربراہی میں نئی گج ڈیم کی تعمیر سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی اور وفاقی وزیر آبی وسائل فیصل واوڈا عدالت میں پیش ہوئے۔

چیف جسٹس نے مہمند ڈیم کے سنگِ بنیاد کی تاریخ تبدیل کرنے پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ مہمند ڈیم کے گراؤنڈ بریکنگ کی تاریخ بھی آپ نے بتائے بغیر بدل دی، یہ بھی مناسب نہ سمجھا کہ چیف جسٹس کو بتا دیا جاتا، حکومت میں اتنی کرٹسی بھی نہیں کہ تاریخ بدلنے کا چیف جسٹس سے پوچھ لیتے، اب میں شاید میں سنگ بنیاد کی تقریب میں نہ جاؤں۔

جسٹس میاں ثاقب نثار نے کہا کہ وزیراعظم نے اپنا شیڈول دیکھا اور تاریخ بدل دی، یہ نہ دیکھا ہم نے بھی کام دیکھنا ہوتا ہے۔

چیف جسٹس نے وفاقی وزیر سے سوال کیا کہ حکومت نےاب تک کیا کیا ؟ سوائے اس اعلان کے کہ 2025 میں پانی ختم ہو جائے گا؟ ہم آپ کو فنڈ اکٹھا کرکے دے رہے ہیں۔

اس موقع پر وفاقی وزیر فیصل واوڈا نے کہا کہ میں حکومت کی طرف سے آپ سے معافی مانگتا ہوں، چیف جسٹس نے ناراضی کا اظہار کیا اور کہا کہ اب وزیراعظم کو کہیں مہمند ڈیم کا افتتاح کرنے وہی جائیں۔

چیف جسٹس کی ناراضی پر وفاقی وزیر نے اصرار کیاکہ نہیں آپ کو شامل ہونا پڑےگا، آپ کو ڈیم کے افتتاح کے لیے بھی بلائیں گے اور میں بھی آپ سے درخواست کروں گا۔

معزز چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ وزیراعظم کو پتا ہی نہیں کہ کتنے معاملات پڑے ہوئے ہیں۔

دوران سماعت چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ اگلی سماعت پر چاروں منسڑز آکر بتائیں کہ نئی گج ڈیم پر کیا کرنا ہے، معاملہ 2008 سے زیر التواء ہے، اگر آپ نے یہ ڈیم نہیں بنانا تو بتا دیں ہم حکم میں لکھوا دیتے ہیں، ہم نے یہ کیس اس وقت اٹھایا جب حکومت میں نااہل لوگ تھے، اب تو قابل اور اہل لوگ حکومت میں ہیں۔

عدالت نے منصوبے کی جمعرات کو ابتدائی منظوری کی حکومتی یقین دہانی پر سماعت جمعہ تک ملتوی کردی۔

دوسری جانب سپریم کورٹ میں چیف جسٹس پاکستان کی سربراہی میں دیامر بھاشا اور مہمند ڈیم سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی۔

دورانِ سماعت چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ واپڈا ہم سے کوئی رابطہ نہیں کر رہا، واپڈا سمجھتا ہےکہ اسے آزادی مل گئی اور اب وہ مرضی کے مطابق کام کرے گا، ڈیم تعمیر کی نگرانی سپریم کورٹ کررہی ہے، وزارت آبی وسائل یا واپڈا نہیں، عدالت کی نگرانی میں ڈیم بنے گا۔

جسٹس ثاقب نثار نے استفسار کیا کہ ہمیں بتائیں کہ کب افتتاح کرنا ہے کب کام شروع کرنا ہے؟ اٹارنی جنرل نے عدالت میں جواب دیا کہ ایک ڈیم 2027 میں بنے گا۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ آپ کے وزیراعظم کے مطابق 2025 میں پاکستان میں پانی ختم ہوجائے گا،آپ کی حکومت ہے، اداروں میں کوئی تعاون ہی نہیں۔

اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایاکہ ڈیم کا کل تخمینہ 1450 ارب روپے ہے، اس پر چیف جسٹس نے سوال کیا کہ حکومت نے کبھی سوچا کہ ڈیم بنانے کیلئے پیسے کہاں سے آئیں گے؟ ہم نے کبھی نہیں کہا فنڈ سے ڈیم بن جائے گا لیکن ایک مہم بن جائے گی اور وہ بن گئی ہے۔

اس موقع پر چیف جسٹس نے بتایا کہ آج بھی ایک شخص 10 لاکھ کا چیک دے گیا، میری جیب میں پڑا ہے، چیف جسٹس پاکستان نے چیک نکال کر عدالت میں دکھایا اور ریمارکس دیےکہ یہ ہے وہ جذبہ جس سے کام ہوتے ہیں۔

جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ آپ لوگوں کا صرف یہ کام ہے کہ ٹی وی پر بیٹھ کر ایک دوسرے کے خلاف بیان دیں، دیامر بھاشا ڈیم پر کوئی تنازع ہوا تو صرف سپریم کورٹ کا عملدرآمد بینچ ہی سنے گا، پاکستان کی کوئی دوسری عدالت اس تنازعے کو نہیں سن سکتی۔

Please follow and like us:

سپریم کورٹ کا بلاول بھٹو زرداری کا نام ای سی ایل سے نکالنے کا حکم

اسلام آباد:سپریم کورٹ نے بلاول بھٹو زرداری اور وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ کا نام ای سی ایل سے نکالنے کا حکم دے دیا۔

چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں جسٹس اعجازالاحسن اور جسٹس فیصل عرب پر مشتمل سپریم کورٹ کے 3 رکنی بینچ نے جعلی بینک اکاؤنٹس کیس کی سماعت کی۔

بحریہ ٹاؤن کے وکیل خواجہ طارق رحیم نے عدالت کے روبرو موقف اختیار کیا کہ جے آئی ٹی رپورٹ کے پیرا گراف 275 میں فاروق ایچ نائیک کے بیٹے کا ذکر ہے، الزام لگایا گیا کہ کراچی میں فاروق نائیک کے بیٹے نے دو گھراہلیہ کے نام خریدے، کہا گیا نیب فاروق نائیک اور سندھ حکومت کے گٹھ جوڑ کی تحقیقات کررہا ہے، انہیں وکلاء کے خلاف تحقیقات پراعتراض ہے۔

جسٹس اعجازالاحسن نے ریمارکس دیئے کہ ملک میں کوئی مقدس گائے نہیں ہے، تحقیقات میں علم ہو جائے گا گٹھ جوڑ ہے یا نہیں، جس پر طارق رحیم نے کہا کہ ایسی باتوں سے پنڈورا بکس کھلے گا۔

وکیل اومنی گروپ کے وکیل نے کہا کہ یکم جنوری کو افتخار درانی نے کہا کہ حکومت نے کسی کا نام ای سی ایل پر نہیں ڈالا، اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایا کہ کابینہ میں جے آئی ٹی میں نام آنے پر 172 افراد کو ای سی ایل میں شامل کرنے کا معاملہ رکھا گیا ہے، کابینہ 10 جنوری کی میٹنگ میں ای سی ایل سے متعلق فیصلہ کرے گی۔

چیف جسٹس نے اومنی گروپ کے وکیل سے مکالمے کے دوران ریمارکس دیئے کہ معاملہ کابینہ کو دوبارہ اسی لئے بھجوایا تھا، آپ کو اعتراض ہے تو میں نام ای سی ایل میں ڈال دیتا ہوں، آپ نے قسم کھا لی ہے کہ کیس آگے نہیں چلنے دینا، کیس نیب کو بھجوانے پر دلائل دیں، اومنی گروپ کے خلاف اتنامواد آ چکا ہے کہ کوئی آنکھیں بند نہیں کر سکتا، اوپر سے چینی کی بوریاں بھی اٹھا لی گئیں، یہ بتائیں کہ معاملہ اب کس کورٹ کو بھیج دیں؟۔

چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ جے آئی ٹی نے بلاول بھٹو کو معاملے میں کیوں ملوث کیا؟ کس کے کہنے پر بلاول کا نام ای سی ایل میں ڈالا گیا، چیف جسٹس بلاول معصوم نے پاکستان میں آکر ایسا کیا کردیا،بلاول صرف اپنی ماں کا مشن آگے بڑھا رہا ہے، جہاں جہاں بلاول بھٹو زرداری کا نام ہے اس حصے کو حذف کیا جائے،بلاول اور فاروق ایچ نائیک کے حوالے سے جے آئی ٹی سے جواب لیں گے۔

جسٹس ثاقب نثار نے ریمارکس دیئے کہ جمہوریت بہت بڑی رحمت ہے، الیکشن سے قبل لوگ کہتے تھے کہ الیکشن نہیں ہونگے،  شکرہے الیکشن ہوگئے، ہم نے آئین کے تحفظ کا حلف لے رکھا ہے، ہم کسی کو بنیادی حقوق کی خلاف ورزی نہیں کرنے دیں گے، یہ عوام سے ہماری کمٹمنٹ ہے کہ آئین کا دفاع کریں گے، سیاسی اسکورنگ کے لیے وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ اور بلاول بھٹو کا نام ای سی ایل میں شامل کیا گیا، صرف ڈائریکٹر بن جانے سے کیسے ثابت ہوتا ہے کہ بلاول کسی اسکینڈل میں شامل ہوگیا،جائیداد کو منجمد کر دیتے ہیں لیکن اس بنیاد پر بلاول کا نام ای سی ایل میں نہیں ڈالا جا سکتا، مراد علی شاہ کی عزت نفس مجروح کی جا رہی ہے، دیکھ تو لیتے کہ مراد علی شاہ ایک صوبے کے وزیراعلیٰ ہیں، بلاول بھٹو زرداری اور مراد علی شاہ کا نام ای سی ایل سے نکالیں۔

سپریم کورٹ نے نیب کو حکم دیا کہ سارے معاملے کی ازسرِ نو تفتیش کرے اور اسے 2 ماہ میں مکمل کرکے رپورٹ پیش کرے، تفتیش کے بعد اگر کوئی کیس بنتا ہے تو بنایا جائے۔ جے آئی ٹی اس کیس پر اپنے طور پر کام کرتی رہے اور کوئی چیز سامنے آتی ہے تو نیب کو فراہم کرے۔

Please follow and like us: