Press "Enter" to skip to content

بھارت نے غیر ملکی صحافی کو کشمیر میں داخل ہونے سے روک دیا

سری نگر : بھارتی فورسز  نےکشمیر میں جاری بھارتی مظالم کی پردہ پوشی کے لیے غیر ملکی صحافی کو مقبوضہ وادی میں داخل ہونے سے روک دیا۔

تفصیلات کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں قابض بھارتی فورسز نے ریاستی دہشت گردی جاری رکھتے ہوئے مقبوضہ وادی میں صحافیوں کے داخلے پر بھی پابندی عائد کردی۔

کشمیر میڈیا سروس کا کہنا ہے کہ غیر ملکی فوٹو جرنلسٹ کیتھل میگ نوتن کشمیر کے عوام سے ملنا چاہتے تھے لیکن بھارت کشمیری عوام پر جاری بھارتی ظلم و بربریت کی پردہ پوشی کےلیے قانون کی خلاف ورزی کا بہانہ بناکر غیر ملکی صحافی کو مقبوضہ وادی میں جانے سے روک دیا۔

یاد رہے کہ آج قابض بھارتی فورسز نے مقبوضہ کشمیر کے علاقے پلواما میں نام نہاد سرچ آپریشن کے دوران اندھا دھند فائرنگ کرکے کشمیری نوجوان کو شہید کردیا تھا۔

میڈیا ذرائع کا کہنا ہے کہ اشفاق احمد وانی نے ایم بی اے کی ڈگری حاصل کر رکھی تھی، نوجوان کی شہادت کے بعد پلواما، ضلع اسلام آباد میں بھارتی بربریت کے خلاف شدید مظاہرے شروع ہوگئے۔

کشمیری میڈیا کا کہنا ہے کہ ظالم بھارتی فوج کی جانب سے کشمیری نوجوان کی شہادت کے بعد علاقے میں غیراعلانیہ کرفیو نافذ کردیا گیا ہے، جبکہ انٹرنیٹ اور موبائل فون سروس بھی بند کردی گئی ہے۔

خیال رہے کہ گزشتہ ماہ کشمیری رہنما میرحفیظ اللہ بھارتی قید سے آزاد ہو کرپہنچے تھے اورانہیں مسلسل نامعلوم نمبرز سے دھمکی آمیز کالز موصول ہو رہی تھیں۔

کشمیری میڈیا کے مطابق 20 نومبر کو میرحفیظ اللہ کو ان کے گھر میں گھس کر فائرنگ کرکے قتل کردیا گیا تھا۔

واضح رہے کہ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج آزادی کی آواز کو دبانے کے لیے مختلف ہتھکنڈے استعمال کررہی ہے اور اب تک ہزاروں کشمیری شہید اور زخمی ہوچکے ہیں۔

Please follow and like us:

Comments are closed.